٭…حلال جانوروں اور پرندوں کا گوشت کھانا بھی اس وقت جائز ہوگا جب ان کو شرعی طریقے سے ذبح کیا گیا ہو ٭…مصنوعی فوڈ ایڈیٹوز قدرتی طور پر پائے نہیں جاتے بلکہ دیگر اجزا کوملاکر تیار کیا جاتاہے
تجارتی پیمانے پر جو غذائیں یا مشروبات تیار شدہ فروخت کیے جاتے ہیں۔ ان کے اجزائے ترکیبی (ingredients) کو اگر جانچا جائے تو اس میں دو قسم کی اشیا شامل ہوتی ہیں۔

1 غذا (Food)
2 غذا میں شامل اضافی اجزا یعنی فوڈ ایڈیٹوز(Food Additives)
1 غذا(Food)
انسانی غذا کے اہم ذرائع دو ہیں۔ اگرچہ ایک تیسرا غیر روایتی ذریعہ یک خلوی خمیر (yeast) بھی منظر عام پر آیا ہے لیکن وہ اتنا بڑا ذریعہ نہیںہے۔ انسانی غذا کے اہم دو ذرائع یہ ہیں:(الف) نباتاتی ذرائع (ب)
حیواناتی ذرائع


٭…حلال جانوروں اور پرندوں کا گوشت کھانا بھی اس وقت جائز ہوگا جب ان کو شرعی طریقے سے ذبح کیا گیا ہو ٭…مصنوعی فوڈ ایڈیٹوز قدرتی طور پر پائے نہیں جاتے بلکہ دیگر اجزا کوملاکر تیار کیا جاتاہے

نباتاتی ذرائع درج ذیل ہیں:
1سبزیاں: زمین دوز سبزیاں جیسے: آلو، گاجر، چقندر، شکر قندی، پیاز، لہسن ، ادرک وغیرہ۔ زمین سے باہر اگنے والی سبزیاںجیسے :پھول، گوبھی، مٹر، ٹماٹر، بینگن، کدو، کریلا، حلوہ کدو، گھیا توری ، بھنڈی، مرچ، کھیرا، بند گوبھی، پالک اور ساگ وغیرہ۔
2 پھل: جیسے : کیلا، سیب، امرود، ناشپاتی، تربوز، خربوزہ، خوبانی، آڑو، آم، مالٹا، سنگترہ، انار، انناس، آلو چہ، آلو بخارا، جامن اور بیر وغیرہ ۔
3دالیں: جیسے : چنے، مونگ، مسور، ماش اور سویا بین وغیرہ۔
4اناج: جیسے: گندم، مکئی، چاول، باجرہ، اور جو وغیرہ ۔
5 تیل دار اجناس :(جن اجناس سے کھانے کا تیل حاصل کیا جاتا ہے) جیسے: زیتون، مکئی، سورج مکھی، بنولہ، کینولا، کھوپرا، تل اور سویابین وغیرہ۔
نباتاتی ذرائع کا شرعی حکم
تمام نباتات حلال ہیں سوائے ان کے جو نشہ آور یا انتہائی مضر صحت ہوں۔نباتاتی ذرائع کے بعد سمجھیے کہ حیواناتی ذرائع کیا ہیں؟
1جانور: جن سے گوشت اور دودھ حاصل ہوتا ہے۔ یہ جانور پالتو بھی ہوسکتے ہیں ۔ جیسے: گائے، بھینس، اونٹ، بکری اور بھیڑ وغیرہ اور جنگلی بھی جیسے: ہرن، بارہ سنگھا اور نیل گائے وغیرہ۔
2پرندے:جن سے گوشت اور انڈے حاصل کیے جاتے ہیں۔پرندے پالتو بھی ہوسکتے ہیں، جیسے: مرغی، کبوتر اور بٹیر وغیرہ۔یہ جنگلی بھی جیسے: مرغابی، چڑیا، تیتراور بٹیر وغیرہ۔
3آبی جانور: جیسے مچھلی۔ حیواناتی ذرائع کا شرعی حکم
1خنزیر کو قرآن مجید میں واضح طور پر حرام قرار دیاگیا ہے اور اس کے سوا جو جانور اور پرندے شکار کر کے کھاتے پیتے رہتے ہیں یا ان کی غذا فقط گندگی ہے ان کا کھانا بھی جائز نہیں، جیسے: شیر، بھیڑیا، گیدڑ، بلی، کتا، بندر، شکرا، گدھ، وغیرہ اور جو ایسے نہ ہوں جیسے طوطا، مینا، فاختہ، چڑیا، بٹیر، مرغابی، کبوتر، نیل گائے، ہرن، بطخ، خرگوش، وغیرہ سب جانور حلال ہیں۔ 2حلال جانوروں اور پرندوں کا گوشت کھانا بھی اس وقت جائز ہوگا جب ان کو شرعی طریقے سے ذبح کیا گیا ہو۔
3دریائی جانور میں سے فقط مچھلی حلال ہے۔
2غذا میں شامل اضافی اجزا یعنی فوڈ ایڈیٹوز اس کی کچھ تفصیل گزشتہ کسی شمارے میں آچکی ہے۔ فوڈ ایڈیٹوز کے حوالے سے تحقیق کا ایک رخ مزید ملاحظہ فرمائیے۔
فوڈ ایڈیٹوز (Food Additives)میں غذائیت معدوم یا معمولی ہوتی ہے۔ ان کو غذا میں متنوع مقاصد کے لیے شامل کیا جاتا ہے۔ ان مقاصد کے اعتبار سے ان کے نام بھی مختلف ہیں، مثلا:ً آئس کریم، چاکلیٹ اور مارجرین وغیرہ میں پانی اور تیل دونوں کو باہم ملانے کے لئے ان میں ایملسیفائر (Emulsifier) ملایا جاتا ہے۔ گویا ایملسیفائر کا کام یہ ہے کہ وہ تیل اور پانی کو باہم ملائے۔ یہ نام فوڈ ایڈیٹیوز کی ایک قسم اور مقصد کے اعتبار سے ہوا۔اب ایملسیفائر کے طور پر جو اجزا ملائے جاتے ہیں وہ فوڈ ایڈیٹو زکہلاتے ہیں۔ایملسیفائر کے
طور پر آجکل درج ذیل فوڈ ایڈیٹوز(Food Additves) ملائے جاتے ہیں: سویا لیسی تھین (Soy lecithin)
انڈے کی زردی (yolk)
پولی سوربیٹس(Polysorbate)
سوربیٹین مونو اسٹریٹ(Sorbitan monostearate)
اس طرح فوڈ ایڈیٹوز غذا میں ذائقہ ، پائیداری، توازن اور رنگ سمیت کئی مقاصد کے لیے شامل کیے جاتے ہیں۔ ان کی تمام اقسام اور مقاصد کا احاطہ ان شا ء اللہ آئندہ کسی مضمون میں کیا جائے گا۔ فوڈ ایڈیٹوز قدرتی(Natural) ، قدرتی کے مماثل(Natur Identical) اور مصنوعی(Artificial) تینوں طرح کے ہوسکتے ہیں۔ قدرتی کی مثال، چقندر کا رس ہے جو کہ میٹھی چیزوں میں رنگ کے طور پراستعمال ہوتا ہے۔قدرتی کے مماثل کی مثال بینزوئک ایسڈ(Benzoic acid) ہے جو کہ قدرتی طور پر بھی پایا جاتا ہے اور مصنوعی طور پر بھی تیار کیا جاتا ہے اور محفوظ کنندہ (Preservative) کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔مصنوعی فوڈ ایڈیٹوز قدرتی طور پر پائے نہیں جاتے بلکہ دیگر اجزا کوملاکر تیار کیا جاتاہے۔ فوڈ ایڈیٹیوز Additives) (Foodکا شرعی حکم
فوڈایڈیٹیوز درج ذیل تین ذرائع میں سے کسی سے ماخوذ ہوںگے۔ 1 حیوانات 2 نباتات 3 معدنیات
(1)نباتات یا معدنیات سے ماخوذ ہونے والے فوڈ ایڈیٹیوز حلال ہیں بشرطیکہ نشہ آور یا انتہائی مضر صحت نہ ہوں۔ واضح رہے کہ کھجور یا انگور سے بنایا گیا الکحل ہر حال میں حرام ہے خواہ اس میں نشہ یا ضرر ہو یا نہ ہو۔
(2)حیوانات سے ماخوذ ہونے والے فوڈ ایڈیٹیوز اس وقت حلال ہوں گے جب وہ ایسے حلال جانور سے حاصل کیے گئے ہوں جن کو شرعی طریقے سے ذبح کیا گیا ہو۔
(3)صرف حلال جانور کے دودھ اور حلال پرندے کے انڈے سے بنے ہوئے فوڈ ایڈیٹیوز حلال ہیں۔