سکے سے کریڈٹ کارڈ تک

٭۔۔۔۔۔۔ سکّہ پرانے زمانے کی سوداگری سے آج کی رول ماڈل ٹریڈ تک بزنس کی روح رواں کے طور پر اپنی اہمیت منوائے ہوئے ہے
٭۔۔۔۔۔۔ کرنسی بننے کے لیے ایسی چیز کا ہونا ضروری تھا جو پائیدار اور کم یاب ہو، ضخیم نہ ہو۔ یہی وجہ تھی کہ سونے، چاندی،

تانبے اور کانسی کے سکے ہر جگہ رائج ہونے لگے

مزید پڑھیے۔۔۔

نبویؐ ہدایات کی روشنی میں

٭۔۔۔۔۔۔ حضورؐ نے فرمایا: ''جس نے عیب دار چیز کو عیب بتائے بغیر بیچ دیا وہ ہمیشہ غضبِ الٰہی میں اور فرشتوں کی لعنت میں گرفتار رہے گا۔''
٭۔۔۔۔۔۔ متانت اور نرم خوئی سے معاملہ کرنے والے پر خدا کی رحمت اترتی ہے
24ھ میں سب سے پہلے کچھ تاجر ہندوستان کے شہر کیرالہ میں تشریف لائے۔ وہ مقامی باشندوں کے ساتھ عام تجارتی سطح کے

مزید پڑھیے۔۔۔