سوال:
بندہ کو انٹرنیٹ پر بزنس سٹارٹ کرنے کے لیے کچھ شرعی رہنمائی کی ضرورت ہے۔ جس کی تفصیل درج ذیل ہے۔ بندہ اپنے ایک دوست کے ساتھ مل کر انٹرنیٹ پر ایک نئی ویب سائٹ جاری کرنا چاہتا ہے جو کہMLM کے بنیادی اصول پر کام کر ے گی۔ MLM (Multi Level Marketing)میں اصول یہ ہوتا ہے کہ ایک یوزر کسی دوسرے یوزر کو لے کر آتا ہے تو اس آنے والے کا کمیشن اس لانے والے کو

ملتا ہے ۔ اسی طرح یہ کام ملٹی لیول پر چلتا ہے ۔ہمارا ارادہ کچھ اس طرح کام کرنے کا ہے کہ ہر یوزر کی رجسٹریشن پانچ ڈالر سے ہوگی ۔ یہ پانچ ڈالر ہر مہینے کی رجسٹریشن ہو گی۔ ہر یوزر کو سات لیولز(Levels)دیے جائیں گے۔ اس میں شرط ہو گی کہ ہر یوزر کو پہلے لیول پر فی پوزیشن دو ڈالر بطور کمیشن دیے جائیں گے۔ اسی طرح تین پوزیشنز کے بعد اس کا پہلا لیول مکمل اور دوسرا شروع ہو جائے گا۔ دوسرے لیول میں اس کو9پوزیشنز دی جائی گی ۔ یہ9پوزیشن پوری ہونے کے بعد اس کا تیسرا لیول شروع ہو جائے گا اور اسی طرح شکل کے مطابق لیولز میں پوزیشنز ہوں گی۔ اس میں کوئی شرط نہیں ہو گی کہ اس کا پہلا، دوسرا، تیسرا یا کوئی بھی لیول پورا کرنے کے لیے وہ خود نئے ممبرز لے کر آیا یا اس کے لائے گئے ممبرز نے نئے ممبرز آگے بنائے یا اس ممبر نے جو اس کو لے کر آیا تھا اس کے پہلے لیول میں نئے یوزر ڈالے۔ تینوں صورتوں میں اس کو ہر لیول کی فی پوزیشن کے حساب سے اوپر دی گئی شکل کے مطابق کمیشن دے دیا جائے گا۔ اسی طرح پیسے دینے میں اس چیز کی کوئی تمیز نہیں کی جائے گی کہ وہ بندہ خود نئے یوزر لا رہا ہے یا کہ اس کے لائے ہوئے یوزرز آگے اپنی آمدن کے لیے نئے یوزر لا رہے ہیں۔ ہر یوزر کے پہلے لیول میں تین پوزیشنز ہوں گی اور ہر یوزر کو پہلے لیول پر ایک پوزیشن پوری ہونے پر دو ڈالرز بطور کمیشن ادا کر دیے جائیں گے، اس طرح یہ کام چلتا رہے گا اور سات لیویز تک چلے گا، ہر لیول کی کمیشن الگ ہو گی۔ یوزر کا کمیشن ہماری ویب سائٹ پر ہی جمع ہوتا رہے گا اور یہ کمیشن یوزر کو دو مخصوص ایام یعنی ہرماہ کی 1اور15 تاریخ کو اس کے اکاؤنٹ میں ہی جمع ہو گا جو ہماری ویب سائٹ پر یوزر کو اکاؤنٹ دیا جائے گا۔
یہاں ہمارے پاس دو راستے ہیں: پہلا یہ کہ ہم اپنی ویب سائٹ پر رجسٹر ہونے والے یوزر کو اپنی طرف سے اس کے پانچ ڈالر کے عوض کوئی سروس فراہم کریں اور دوسرا یہ کہ ہم اس یوزر کو کوئی سروس فراہم نہ کریں۔ یہاں پر ایک بات بہت قابل ذکر ہے اگر ہم پہلا راستہ اختیار کرتے ہیں تو ہماری سروس اس قابل ہرگز نہیں ہو گی کہ کوئی یوزر صرف ہماری سروس حاصل کرنے کے لیے پانچ ڈالر فی مہینہ دینے کے لیے تیار ہو جائے۔ یوزر پانچ ڈالر فی مہینہ صرف کمیشن بنانے کے لیے ہی دینے کے لیے تیار ہو گا نہ کہ ہماری سروس حاصل کرنے کے لیے۔ لیکن اتنا ضرور ہو گا کہ اس کو ہم اس کے پانچ ڈالر کے عوض کچھ تھوڑی بہت سروس ضرور فراہم کر دیں گے۔ لیکن اس صورت میں چونکہ ہم اس کو سروس فراہم کر رہے ہوں گے اس لیے پیسے واپس نہیں کیے جائیں گے۔

دوسری صورت میں اہم نکتہ یہ ہے کہ اس کام میں ہم یوزر سے وصول کیے گئے پیسوں یعنی اس مثال کے مطابق پانچ ڈالر کے عوض اس کو کوئی بھی سروس فراہم نہیں کر رہے۔ یوزر کو ہمارے ساتھ رجسٹریشن کروانے کا کوئی فائدہ نہیں ہو گا ، سوائے اس کے کہ وہ اپنی طرح اور یوزر لائے جو کہ پانچ ڈالر خرچ کر کے ہمارے ساتھ رجسٹر ہوں اور اس کے بعد اس کو کمیشن دیا جائے ۔ پھر جیسے جیسے اس کا نیٹ ورک بڑھتا جائے گا اس کی آمدنی بھی بڑھتی چلی جائے گی۔ یہاں تک کہ جب اس کے سارے لیولز پورے ہو جائیں گے تو اس کی آمدنی ہر مہینے یہاں پر اسٹاپ ہو جائے گی۔ یوزر کو پہلے بتایا جائے گا کہ آپ ہمارے ساتھ کام کر کے زیادہ سے زیادہ اتنی آمدنی ایک اکاؤنٹ میں حاصل کر سکتے ہیں، یعنی اس مثال کے مطابق فی 0858.2$مہینہ۔ یوزر کو اس بات اجازت بھی دی جائے گی کہ وہ جتنے مرضی اکاؤنٹ پانچ ڈالر فی مہینہ کے عوض ہمارے ساتھ رجسٹر کروا سکتا ہے۔ اس کی ہر اکاؤنٹ کی آمدنی اس اکاؤنٹ میں موجود یوزر کے حساب سے دی جائے گی، مثلاً: اگر اس کے ایک اکاؤنٹ میں تین لیول پورے ہیں تو اس اکاؤنٹ میں اس کی آمدنی 15.45$فی مہینہ ہو گی، جبکہ دوسرے اکاؤنٹ میں اگر صرف ایک لیول پورا ہے تو اس کی آمدنی اس اکاؤنٹ کی صرف 6$فی مہینہ ہو گی۔ اس طرح اس کی ٹوٹل آمدنی $=21.45$ 15.45+6فی مہینہ ہو گی، جب کہ وہ ہمیں دو اکاؤنٹس کے پانچ ڈالر کے حساب سے دس ڈالر فی مہینہ دے رہا ہو گا۔یہ تمام باتیں ہم اپنی ویب سائٹ پر لگا دیں گے تا کہ یوزر کو رجسٹریشن سے پہلے ہی پتا ہو کہ اس نے کیا کرنا ہے۔{ XE " :" } اب اس اہم نکتے کا کہ ہم کسی کو اس کے پانچ ڈالر کے عوض اپنی کوئی سروس فراہم نہیں کر رہے، حل یہ نکالا ہے کہ چونکہ ہم یوزر کو کوئی سروس نہیں فراہم نہیں کر رہے، سوائے اس کے کہ وہ نئے یوزر لے کر آئے اور پیسے کمائے تو اس طرح اگر کوئی یوزر تین ماہ تک نئے یوزر نہیں لا سکتا اور اس کو اوپر سے بھی کوئی یوزر نہیں ملتا اور وہ ہمارے ساتھ مسلسل تین ماہ تک رجسٹر رہ کر پانچ ڈالر ہر مہینے ہمیں ادا کرتا رہتا ہے تو اس بے چارے کے 15ڈالر ضائع ہو جائیں گے۔ اس ضیاع کو بچانے کے لیے ہم اس کو اس کے وہ 15ڈالر پیسے بھیجنے اور وصول کرنے کے پیسے جو کہ کمپنی(Alert Pay)ہم سے لے گی، کاٹ کر اس کی باقی رقم اس کو اسی طرح واپس کر دیں گے جس طرح کہ اس نے ہمیں جمع کرائے تھی۔ یہ کام3 سے5 ورکنگ دنوں میں مکمل کر دیا جائے گا۔
اس میں بھی مسئلہ یہ ہے کہ ہم اس3 کا مہینے کا کمیشن اس کے اوپر والے ساتھی کو دے چکے ہوں گے،اس لیے ہم اب اس سے کمیشن واپس نہیں لیں گے، بلکہ اپنی طرف سے 15ڈالر اس یوزر کو واپس کریں گے۔ اس لیے اس کو وہ 15ڈالر 3ماہ سے پہلے ادا کرنا ہمارے لیے ممکن نہیں ہو گا۔ یہ پیسے اس کو صرف اسی صورت میں واپس کیے جائیں گے کہ اگر وہ ہمارے ساتھ مسلسل 3ماہ تک کام کرنے کے بعد بھی اپنا پہلا کمیشن یعنی 2ڈالر بھی وصول نہیں کر پاتا۔ اگر اس کو3 ماہ میں ایک یوزر بھی مل گیا تو اس کو 2ڈالر کا کمیشن جنریٹ ہو جائے گا ،اس صورت میں وہ یوزر اپنے پیسے واپس نہیں لے سکے گا۔ اگر وہ مزید کام نہیں کرنا چاہتا تو اس کی مرضی ہو گی کہ وہ اگلے مہینے ہمیں پیسے ادا نہ کرے اور اپنی رجسٹریشن کینسل کروا دے۔
ایک اور بات کہ ہم کسی ایسے شخص کو جو کسی بھی یوزر کی ٹیم میں نہیں ہو گا،اس کو بھی کسی نہ کسی ٹیم میں ڈال دیا کریں گے، تا کہ یوزرز کا حوصلہ بڑھے اور وہ ہمارے ساتھ مل کر کام کرتے رہیں۔ اس کی مثال اس طرح سمجھی جا سکتی ہے کہ فرض کریں ،ہم نے ویب سائٹ کو جاری کر دیا۔ اب اس کی مشہوری پوری دنیا میں ہو گی۔ اب اگر کوئی یوزر اس کو امریکا سے وزٹ کرتا ہے اور اس کو کوئی بھی ہماری سائٹ پر ریفر کرنے والا نہیں ہے اور وہ اس سسٹم کو خود ہی پڑھ کر ہمارے ساتھ رجسٹر ہو جاتا ہے تو اس صورت میں ہماری ویب سائٹ اس یوزر کو بھی کسی نہ کسی ٹیم میںڈال دے گی اور کوشش یہ کی جائے گی کہ یہ یوزر کسی ایسے ممبر کی ٹیم میںڈالا جائے جس کے پاس ابھی تک کوئی یوزر نہ ہو ۔اس طرح اس کا حوصلہ بھی بڑھے گا اور اس کو 2ڈالر اس کے پہلے لیول میں ایک یوزر آ جانے پر کمیشن کے طور پر ادا کر دیے جائیں گے۔ اگرچہ وہ از خود ہی اس کوکسی ٹیم میں ہماری ویب سائٹ نے ڈال دیا ہو اور اس نے اس پر کوئی محنت بھی نہ کی ہو۔ یہ سسٹم مکمل طور پر رینڈم (Random) پوزیشنز پر جائے گا۔ اس بارے میں کچھ بھی مکمل اعتماد سے نہیں کہا جا سکتا کہ ویب سائٹ اس کو کس ٹیم میںڈالے گی؟ کیونکہ ویب سائٹ کی کوڈنگ (Coding) کے دوران اس کو یہی بتایا جائے گا کہ جو بھی ممبر کسی کے ریفرل لنک کے بغیر رجسٹر ہو اس کو کسی نہ کسی ممبر کی ٹیم (Ramdomly) داخل کر دو۔ اور اس طرح وہ ممبر جو کسی کے بھی ریفرل لنک سے نہیں آیا ہو گا خود بخود کسی نہ کسی کی ٹیم میں چلا جائے گا۔
محترم مفتی صاحب! اس منصوبے میں رجسٹریشن فیس میں کمی بیشی اور کمیشن اور رجسٹریشن کی ادائیگی کو ماہوار یا ہفتہ وار یا پندرہ روزہ میں بھی تبدیل کیا جا سکتا ہے۔ اور کمیشن میں بھی کمی بیشی کی جا سکتی ہے، مثلاً: پہلے لیول پر 2ڈالر کے بجائے1 ڈالر3 ڈالر اور رجسٹریشن فیس 5ڈالر کے بجائے 3ڈالر یا 7 ڈالر اور اسی طرح رجسٹریشن کی مدت میں بھی کمی بیشی کی جا سکتی ہے، مثلاً: 5ڈالر ماہوار یا5 ڈالر15 روزہ یا 5ڈالر ہفتہ وار یا کچھ اور بھی۔ لیکن منصوبہ مکمل طور پر اسی اصول پر قائم کیا جانا ہے۔
بندہ اس کام کو شروع کرنے سے پہلے اس کام کی شرعی حیثیت جاننا چاہتا ہے۔ تاکہ حرام سے بچا جا سکے۔ اور اگر اس میں کوئی بھی پہلو حرام کا نکلتا ہے تو براہ مہربانی اس کی نشاندہی فرما کر کچھ راہنمائی بھی فرمائیں کہ کس طرح اس حرام چیز کو اس کام سے نکال کر اس کی جگہ حلال چیز داخل کی جا سکتی ہے۔ تاکہ بندہ اس منصوبہ پر کام شروع کرنے سے پہلے ہی اس کی تمام جزئیات کو حرام سے پاک کر سکے۔
جواب:
شریعت اسلامی میں تجارت و کاروبار کو اس لیے جائز رکھا گیا ہے کہ انسان اپنی حاجات و ضروریات کو جائز طریقے سے پورا کر سکے۔ نیز ایک مقصد اصلی یہ بھی ہے کہ زر یعنی روپے کی گردش سے اثاثہ جات و خدمات وجود میں آئیں، تاکہ معیشت میں حقیقی بڑھوتری ہو، معیشت محض الفاظ کا ہیر پھیر اور کھیل بن کر نہ رہ جائے، کہ جس سے دولت چند فنکاروں کے ہاتھوں میں جمع ہو جائے۔ آج کل اسلامی معاشی اصولوں کے بر خلاف ایسے بہت سے کاروبار وجود میں آ چکے ہیں کہ جن کا اصلی مقصد روپیہ کا چند ہاتھوں میں جمع ہونا ہے اور حقیقی اثاثہ جات کا کہیں وجود نہیں ہوتا۔ ایسے کاروباروں کی شریعت میں گنجائش نہیں۔ آپ کا کاروبار بھی اسی نوعیت کا ہے۔ اس کے بجائے آپ کوئی ایسی ویب سائٹ بنا لیں کہ جس میں مختلف علمی یا فنی کورسز کرا سکتے ہیں اور ان چیزوں پر رجسٹریشن فیس رکھ سکتے ہیں، مقصد یہ کہ کوئی خدمات دیں یا کوئی حقیقی شئے فروخت کریںیا کوئی سوفٹ ویئر بنا کر فروخت کریں۔ان دونوں صورتوں سے ہٹ کر مذکورہ طریقے سے لوگوں کے اموال کی وصولی اکل بالباطل(غیر شرعی طریقے سے لوگوں کا مال کھانا) اور حرام ہے۔