تجارت کاجامعۃ الرشید کے تحت شائع ہونے والا یہ مجلہ دینی مسائل ومعلومات کے لحاظ سے بہت اہمیت کا حامل ہے۔ اس کے عنوان سے پتا چلتا ہے کہ یہ مجلہ صرف اور صرف اسلامی تجارتی مصروفیات کو مدِنظر رکھ کر شائع کیا جاتا ہے۔ معلومات تو کسی بھی موضوع پر ہوں، مفید اور کارآمد ہی ہوتی ہیں، مگر اس مجلہ کو شائع کرنے کا ایک اہم مقصد یہ ہے کہ ملک کے کاروباری لوگوں میں اسلام کی رو سے تجارت کرنے کو فروغ دیا جائے۔

تجارت کا ہمارے دین سے بہت گہرا تعلق ہے۔ ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے خود بھی تجارت کی تھی اور اپنے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو بھی تجارت کی ترغیب دی تھی۔ مدینہ میں ہجرت کے بعد یہاں باقاعدہ تجارت کی غرض سے بازار بنایا گیا، جس میں مہاجرین وانصار تجارت کیا کرتے تھے۔ خلفائے راشدین نے بھی اپنے زمانے میں تجارت کو فروغ دیا اور بیرونی ممالک جیسے: شام، مصر، یمن وغیرہ سے بڑے پیمانے پر تجارتی تعلقات قائم کیے۔
اسلام نے تجارت کے کار آمد ہونے کے لیے اسے چند اصولوں پر استوار کیا ہے، جن سے واقف ہونے اور انہیں عملی زندگی میں اپنانے پر ہی دنیا اور آخرت کی کامیابی مضمر ہے۔ انہی تجارتی اصولوں کی عصری تقاضوں کے مطابق ترویج واشاعت کے لیے پاکستان میں یہ مجلہ ''شریعہ اینڈ بزنس'' شائع کیا جا رہا ہے۔
اس مجلہ سے دو طرح کے فوائد حاصل ہو رہے ہیں: ہمارے تاجر بھائیوں کو نہ صرف تجارتی معلومات میسر آ رہی ہیں، بلکہ اسلام کے سنہرے اصولوں سے واقفیت بھی حاصل ہوتی ہے۔ ماشاء اللہ! یہ مجلہ اپنی تیز رفتاری کو قائم رکھے ہوئے ہے اور ہر ہفتہ ہزاروں لوگ ''شریعہ اینڈ بزنس'' کے ذریعے اسلامی اصولوں کی معلومات گھر بیٹھے ہوئے حاصل کر رہے ہیں۔
میں ان لوگوں کی بھی تعریف کرنا چاہتا ہوں جو اس مجلہ کو دن رات سنوارنے اور مکمل مصدقہ معلومات فراہم کرنے میں مددگار ہو رہے ہیں۔ خاص کر مدیر مجلہ کی ذاتی کاوشوں اور تحقیق کو سراہنا چاہتا ہوں جو ماشا اللہ بھر پور طریقے سے اپنی ٹیم سے کام لے کر بروقت مجلہ شائع کرواتے اور مارکیٹ تک پہنچاتے ہیں۔ بلاشبہ اس میں بہت سے لوگ کردار ادا کر رہے ہیں۔ ہماری دعا ہے اللہ تعالی سب کو اپنے غیب کے خزانوں سے بہترین اجر عطا فرمائیں، آمین۔
کتنے ہی تاجر بھائی ہیں جو اس مجلہ کو کثیر تعداد میں لے کر مفت بھی تقسیم کرتے ہیں۔ ہماری یہ بھی خواہش اور کوشش ہو گی کہ یہ مجلہ ملک بھر کی مارکیٹوں میں عوام کو میسر آئے اور مدارس اور اسکولوں میں بھی اس مجلہ کی کاپیاں پڑھنے کو ملیں۔ چونکہ اس مجلہ میں شعبہ افتاء کے لوگ بھی لکھتے ہیں، اس لےے تاجر برادری کو چاہیے کہ وہ اس میں دلچسپی لیں اور اپنے اشکالات کو دارالافتاء میں بھیجیں، تاکہ ان کو بروقت درست معلومات میسر آئیں۔
جیسے جیسے تاجر برادری اسلامی معیشت وتجارت کو اپنائے گی، ایسے ایسے ملک میں حلال معیشت کا دور دورہ ہو گا۔ حلال رزق ہر مسلمان کے لےے نہایت ضروری ہے۔ اگر کھانا، پینا اور پہننا، اوڑھنا ہی حرام مال سے ہو گا تو تباہی یقینی ہو گی۔ ایسے تاجر دنیا میں ضرور کچھ فوائد حاصل کر لیں گے، مگر ساتھ ہی آخرت کو اپنے ہاتھوں سے تباہ کر لیں گے۔ مسلمان کو دونوں جہانوں کی خوشیوں اور سکون کی ضرورت ہے۔ اس لےے یہ مجلہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کہ اس سے جو اسلامی تجارت کی معلومات میسر ہوں گی ان پر عمل کرنے سے ہر شخص کا رزق حلال اور طیب بن سکے گا۔
اگر تاجر بھائی ہر ہفتے اس رسالے کو اپنے ہاں منگوا کر پڑھیں گے یا تقسیم کریں گے تو جن جن ہاتھوں میں یہ رسالہ جائے گا، ان کی دینی معلومات میں اضافہ ہو گا اور اس کے نتیجے میں لوگ ان پر عمل کریں گے، جس کا ثواب تقسیم کرنے والوں کو ملے گا۔ ہمیں امید ہے کہ اس مجلہ کی اشاعت سے بڑے اچھے نتائج برآمد ہوں گے۔ اللہ تعالی کے فضل وکرم سے اس مجلہ کی اشاعت بھی روز بہ روز بڑھ رہی ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ لوگ دلچسپی سے اسلامی تجارت کی معلومات حاصل کر رہے ہیں اور ان پر عمل کر رہے ہیں۔ ہمارے خیال میں اس مجلہ کے فوائد حاصل ہو رہے ہیں، جن میں انشاء اللہ مزید اضافہ ہو گا۔
اس مجلہ کی اشاعت کے درج ذیل مقاصد ہیں:
1 دینِ اسلام کی اشاعت
2 اسلامی معاشی و تجارتی معلومات فراہم کرنا
3 دارالافتاء سے تاجروں کی رہنمائی کرنا
4 اسلامی تجارت کے اصولوں اور قواعد کو آسان اور سہل انداز میں پیش کرنا
5 مدارس میں اس مجلہ کو پہنچانا تاکہ جو طلبہ دین کے علم میں مشغول ہیں، ان کی عصری تجارتی معلومات میں اضافہ ہو
6 پورے ملک کے تاجروں کے دفاتر تک اس مجلہ کو ہر ہفتہ پہنچانا
7 اشاعت کو بڑھانا تاکہ عام لوگوں تک ان معلومات کی رسائی ہو
8 مجلہ کے کاغذ اور کوالٹی کا خیال رکھنا
9 لوگوں کے اشتہارات کو دیدہ زیب رنگوں میں عوام تک پہنچانا
یہ وہ مقاصد اور فوائد ہیں، جن کی وجہ سے جامعۃ الرشید کی انتظامیہ نے اس کی اشاعت کا اہتمام کیا ہے۔ اللہ سے دعا ہے کہ وہ ہر نمائندے کو جو کسی بھی طرح سے ''شریعہ اینڈ بزنس'' سے منسلک ہے بہترین اجر سے نوازیں، آمین۔