پھلوں کی خرید و فروخت

٭٭آج کل ملکی اور بین الاقوامی سطح پر پھلوں کی خرید و فروخت بہت بڑے پیمانے پر ہو رہی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ دنیا کے کچھ ممالک اس دولت سے مالا مال ہیں اور کچھ تہی دامن، پھر اندرونِ ملک بھی کچھ علاقوں میں ان کی فراوانی ہے اور بعض جگہوں میں بہت قلت۔ چنانچہ اس فطری تقسیم کی وجہ سے مختلف علاقوں اور ممالک کے تاجر دیگر جگہوں سے اس کی خرید و فروخت پر مجبور ہیں۔

مزید پڑھیے۔۔۔

(Islamic Sukuk) اسلامی صکوک

سود پر مبنی مروجہ معاشی نظام کو غیر سودی اور شرعی احکام کے تابع بنانے کے لیے مختلف پہلوؤں سے جد و جہد کی گئی۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ سودی بینکنگ کے مقابلے میں غیر سودی بینکنگ، انشورنس کے مدمقابل تکافل اور بانڈز وغیرہ کی جگہ اسلامی صکوک وجود میں آ گئے۔ ہماری اس تحریر کا موضوع یہی اسلامی صکوک ہیں۔ ھیئۃ المحاسبۃ والمراجعۃ للموسسات المالیۃ الاسلامیۃ (AAOIFI) کے مرتب کردہ المعاییر الشرعیۃ (Shariah Standards) میں صکوک کی تعریف ان الفاظ میں کی گئی ہے:

مزید پڑھیے۔۔۔

تقسیمِ جائیداد میں بے راہ روی

زین ایک پڑھا لکھا نوجوان تھا۔ وہ کاروبار کرنا چاہتا تھا، مگر اس کے پاس سرمایہ نہیں تھا۔ اس نے قرض کے لیے دوستوں، ساتھیوں اور رشتہ داروں سے رابطے کیے، مگر بے سود۔ آخر کار اس کی شادی ایک مال دار عورت صائمہ سے ہو گئی۔ شادی ہوتے ہی صائمہ نے اپنا سارا مال اس کے قدموں میں ڈال دیا۔ زین نے اس مال سے ہارڈ وئیر کا کاروبار شروع کر دیا۔ اللہ تعالی نے مال اور اولاد دونوں میں خوب برکت دی۔ زین اور صائمہ کے تین بیٹے اور دو بیٹیاں تھیں۔ صائمہ کو اچانک کینسر کا مرض لاحق ہو گیا اور وہ دو ماہ ہسپتال میں گزارنے کے بعد خالقِ حقیقی سے جا ملی۔

مزید پڑھیے۔۔۔

میانہ روی اور کفایت شعاری

ایک بزرگ کے پاس ایک شخص حاضر ہوا۔ اپنی تنگ دستی کا شکوہ کرتے ہوئے کہا: ’’حضرت! گھر کے خرچے پورے نہیں ہو رہے، قرض بڑھتا چلا جا رہا ہے۔ کوئی وظیفہ بتا دیجیے، تاکہ اس مشکل سے چھٹکارا ملے۔‘‘ بزرگ نے پوچھا: گھر میں روزانہ کیا سالن پک رہا ہے؟ اس نے جواب دیا: الحمد للہ! معمول کے مطابق پک رہا ہے۔ بزرگ نے پوچھا: معمول کا کیا مطلب! جواب دیا: عام طور پر سادہ سالن ہوتا ہے جبکہ تین، چار دن کے بعد گوشت بھی پک جاتا ہے۔

مزید پڑھیے۔۔۔

ملازمین سے احسان کا معاملہ کرنا

احسان یاد رکھیں ملازمین کے احسان کبھی نہیں بھولنے چاہییں۔ جوملازم مشکل وقت میں آپ کے ساتھ رہے، انہیں اچھے وقت میں نظر انداز نہ کیجئے۔ بہت سے ادارے جب ترقی حاصل کرجاتے ہیں اور ان کو اعلی تعلیم یافتہ افراد میسر آتے ہیں تو پھر وہ اپنے ان ملازمین کو بھول جاتے ہیں جنہوں نے مشکل حالات میں ادارے، کمپنی یا فرم کو سہارا دیا ہوتا ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت سے ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے محسنین کو کبھی بھی فراموش نہیں کیا۔

مزید پڑھیے۔۔۔

عالمگیریت (Globalization) کے چیلنجز

گذشتہ صدی میں دیوار برلن کے انہدام اور سویت یونین کی شکست کے بعد عالمی سطح پر سب سے اہم سوال یہ اٹھا کہ جس دنیا میں ہم رہ رہے ہیں وہ کس سمت جا رہی ہے؟ اس بحث میں سب سے اہم سوال گلوبلائزیشن (جو 1897ء میں یہود قیادت نے پروٹوکولز کے نام سے تشکیل دی تھی) کے بارے میں پیدا ہوا کہ اس کی حقیقت کیا ہے؟ اس کے اغراض و مقاصد کیا ہیں؟ اغراض و مقاصد کے حصول کے لیے کیا اقدامات ہوں؟ اس کے اثرات و نتائج کیا ہوں گے؟

مزید پڑھیے۔۔۔